انڈیا میں انسانیت پامال ہورہی ہے ؛ایمننسٹی انٹرنیشنل

جنیوا: گذشتہ ہفتے جنیوا میں اقوام متحدہ کی حقوق انسانی کونسل میں انڈیا کے حقوق انسانی کی جائزہ رپورٹ منظور کرلی گئی۔ اس سے پہلے مئی میں رکن ممالک نے انڈیا میں انسانی حقوق کے نظام کو مستحکم اور بہتر کرنے کے لیے 250 مخصوص سفارشات پیش کی تھیں۔انڈیا نے ان میں سے 152 سفارشات قبول کر لیں لیکن 98 سفارشات کے بارے میں صرف یہ کہا کہ حکومت نے ان سفارشات کو ‘نوٹ’ کر لیا ہے۔ انڈیا میں کام کرنے والی حقوق انسانی کی تنظیموں نے انڈیا کے اس رویے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ایمنسٹی انٹرنیشنل نے جنیوا میں جاری کیے گیے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہم جنسی کے تعلقات کو جرم کے زمرے سے باہر کرنے، بیوی کے ریپ، اور افریقی نسل کے لوگوں کے خلاف نفرت اور نسل پرستی کے واقعات روکنے سے متعلق سفارشات کو قبول نہ کرنا افسوسناک بات ہے۔حقوق انسانی کی تنظیموں نے سکیورٹی فورسز کو خصوصی اختیارات دینے والے قانون افسپا کو ہٹانے سے متعلق سفارشات بھی تسلیم نہ کیے جانے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ اس قانون کے تحت سیولین کے حقوق انسانی کی پامالی کے واقعات میں سیکورٹی فورسز کے خلاف کارروائی نہیں کی جا سکتی۔اقوام متحدہ میں حقوق انسانی کی کونسل کے بعض ارکان نے انڈیا کو یہ مشورہ بھی دیا تھا کہ وہ بین الاقوامی کرمنل کورٹ کے چارٹر پر دستخط کرے۔ انڈیا نے اسے منظور کرنے کے بجائے صرف اتنا کہا کہ اس نے ان سفارشات کو نوٹ کر لیا ہے۔ بعض ملکوں نے موت کی سزا کو بھی ختم کرنے کا مشورہ دیا تھا جسے انڈیا نے تسلیم نہیں کیا۔انڈیا نے اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کے چارٹر پر بھی دستخط نہیں کیے ہیں۔ حال میں اس نے اعلان کیا تھا کہ انڈیا میں مقیم ہزاروں روہنگیا پناہ گزیں غیر قانونی تارکین وطن ہیں اور انہیں ملک بدر کیا جائےگا۔

About Abdul Rehman

x

Check Also

روہنگیا مسلمانوں کو اب بھی مصائب کا سامنا، قصورواروں کو سزا ملنے کے امکانات معدوم

ڈھاکہ: اقوم متحدہ کے انسانی حقوق کے ماہرین کا کہنا ہے کہ میانمار میں روہنگیا ...