فنگر اور چہرہ شناسی کے بعد ”پسینے کی ب±و“موبائل فون کھولا کرے گی

واشنگٹن:۔موبائل فون ہماری زندگی کا ایک اہم ترین حصہ بن گیا ہے اور اس سے متعلق نت نئی خبریں سامنے آنے کا سلسلہ جاری ہے ۔ موبائل فون کو کھولنے یا اَن لاک کرنے کے لیے سب سے پہلے پاس ورڈ متعارف کرایا گیا۔ بعد ازاں فنگر پرنٹ، آئی پرنٹ اور آخر میں چہرے کے یعنی فیس پرنٹ کا طریقہ سامنے آیا۔ برطانوی اخبارڈیلی میل کے مطابق اس حوالے سے تازہ ترین خبر یہ ہے کہ آئندہ 5 برسوں سے بھی کم عرصے کے دوران آپ اپنا اسمارٹ فون پسینے کی ب±و کے ذریعے کھول سکیں گے۔ بالکل اسی طریقے سے جیسے ابھی فنگر یا فیس پرنٹ کا استعمال کرتے ہیں۔ واضح رہے کہ ہر انسان کے “پسینے کے ذرات کا نقش” منفرد نوعیت کا ہوتا ہے۔ اس کو اسمارٹ فون کے حامل شخص کی شناخت کے واسطے استعمال میں لایا جا سکتا ہے۔نیویارک کی ایلبانے یونی ورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر جان ہیلامک نے بتایا ہے کہ یہ طریقہ ذاتی موبائل کو ہیکروں سے محفوظ رکھنے کے حوالے سے محفوظ ترین ہے اس لیے کہ پسینے کے نقش کو کاپی کرنا انتہائی دشوار ہے۔ انہوں نے کہا کہ “ہم سکیورٹی کی ایک نئی صورت پر کام کر رہے ہیں جو صارف کی تصدیق کے عمل کو یکسر تبدیل کر سکتی ہے۔ پسینے کو صارف کی شناخت کے لیے استعمال کرنا ایسا طریقہ ہے جس کو ہیکر آسانی سے نہیں جان سکتے۔تحقیق میں شریک کیمیاداں کے مطابق یہ نظریہ آئندہ 5 سے 10 برسوں کے دوران حقیقت کا رو±پ دھار لے گا۔پسینے کے ذریعے موبائل فون کھولنے کا طریقہ ان لوگوں کے لیے خاص طور پر بے حد مفید ثابت ہو گا جو اکثر اوقات اپنا پاس ورڈ بھول جاتے ہیں۔ اس کے علاوہ وہ معذور افراد بھی جو اپنے انگلیوں کو اسمارٹ فون کے سینسر پر نہیں رکھ سکتے۔انسانی کھال سے نکلنے والا مادہ ایسے کئی چھوٹے جزئیات پر مشتمل ہوتا ہے جس میں سے ہر ایک کو صارف کی تصدیق کے واسطے استعمال میں لایا جا سکتا ہے۔صارف کے پسینے کا نقش تیار کرنے کے لیے پہلے چوبیس گھنٹوں کے مختلف اوقات میں صارف کے پسینے کی سطح کی پیمائش کی جائے گی۔ اس سلسلے میں صارف کی عمر، جنس، فزیالوجی بھی اہم عوامل ہوں گے۔

About Abdul Rehman

x

Check Also

کیاجنوبی کینرا میں آئی ایس آئی ایس رضاکارموجود ہیں؟سوشیل میڈیاپر متنازعہ آڈیوکلپ وائرل۔پولیس تحقیقات شروع

منگلورو:۔جنوبی کینرا میں ایک مسلم لیڈر کی طرف سے مبینہ طور پر جاری کیا گیا ...