ہندوستان میں میڈیا سنسرشپ۔۔۔آخر مسئلہ کیا ہے؟

دہلی:۔نیوز چینل اے بی پی سے وابستہ دو معروف صحافیوں نے حال ہی میں استعفے دے دیے جس کے بعد بھارت میں میڈیا سنسرشپ کے حوالے سے ایک مرتبہ پھر بحث چھڑ گئی ہے۔ چینل چھوڑنے والوں میں چیف ایڈیٹر میلنڈ کھانڈیکر اور پ±نیہ پرسون واجپائی شامل ہیں جو مشہور ٹی شو ’ماسٹر اسٹروک‘ کے میزبان تھے۔گزشتہ ماہ اس چینل نے ایک رپورٹ نشر کی تھی جس میں چھتیس گڑھ کے ایک گاو¿ں کے رہائشی کی کہانی سنائی گئی تھی۔ اس شخص نے بتایا تھا کہ حکومتی اہلکاروں نے اسے یہ جھوٹ بولنے کو کہا تھا کہ وہ وزیر اعظم نریندر مودی کی دیہاتیوں کے لیے شروع کردہ ایک اسکیم سے مستفید ہوئے تھے۔ اس رپورٹ کے بعد حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی اس ٹی وی چینل سے شدید ناراض ہوئی تھی۔اسی نیوز چینل نے نیوز اینکر ابھیسار شرما کو بھی اس لیے ’آف ایئر‘ کر دیا تھا کیوں کہ انہوں نے چینل انتظامیہ کی جانب سے مودی حکومت کی پالیسیوں پر تنقید نہ کرنے کی پالیسی کی خلاف ورزی کی تھی۔ صحافیوں کا کہنا ہے کہ ملکی میڈیا اداروں کو جس دباو¿ کا اس وقت سامنا کرنا پڑ رہا ہے اس کی مثال ماضی میں نہیں ملتی۔ایک خاتون صحافی سیوانتی نینں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا ”حکومت صحافیوں پر براہ راست دباو¿ نہیں ڈالتی بلکہ وہ میڈیا مالکان پر دباو¿ ڈالتی ہے جو عام طور پر دباو¿ میں آجاتے ہیں۔ بی جے پی کے اقتدار میں آنے کے بعد سیلف سنسرشپ میں بھی بے انتہا اضافہ ہوا ہے۔ اے بی پی نیوز میں جو کچھ ہوا، وہ سنسر شپ کی صرف ایک مثال ہے۔“ایک ماہر عمرانیات سنجے سریواستو نے اس رجحان کو ’پریشان کن‘ قرار دیتے ہوئے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ”بڑی میڈیا آرگنائزیشنز سیاست دانوں اور کاروباری اداروں کی مشترکہ ملکیت میں ہیں، جو ان ٹی وی چینلز اور اخباروں کو مخالفین کو دبانے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔“صحافیوں کے لیے موجودہ سیاسی ماحول میں، جس کا میڈیا منظر نامہ ’الٹرا نیشنل ازم‘ کی چھاپ کی لپیٹ میں ہے، غیر جانبدارانہ رپورٹنگ کرنا انتہائی مشکل ہو چکا ہے۔ صحافیوں پر بلواسطہ دباو¿ ڈالے جانے کے علاوہ سیاسی جماعتوں کے کارکن اور سوشل میڈیا ٹرولز بھی صحافیوں کو منظم انداز میں حراساں کرتے ہیں۔اسی تناظر میں کانگریس پارٹی کے ترجمان ابھیشک سنگھوی نے بھی اپنے ایک حالیہ کالم میں لکھا، ”میڈیا اداروں پر کارپوریٹ اور سیاسی دباو¿ شدید تر ہو چکا ہے اور ایسے میں صرف چند صحافی ہی ایسے ہیں جو غیرجانبداری کا راستہ اختیار کیے ہوئے ہیں۔

About Abdul Rehman

x

Check Also

کروناندھی کے آخری دیدار کےلئے امنڈا ہجوم، بھگدڑ مچنے سے دو لوگوں کی موت، 40 سے زائد زخمی

چنئی:۔تمل ناڈو کے سابق وزیراعلیٰ اور ڈی ایم کے سربراہ ایم کرونا ندھی کی آخری ...